کالم

شاردا پیتھ، پاک فوج اور بھارتی پروپیگنڈا

ہندوستان ایک نام نہاد سیکولر ملک کے دعویدار ہونے کی حیثیت سے اپنے آئین میں درج مذہبی آزادی اور مساوات کے اصولوں کو برقرار رکھنے کا دعوی کرتا ہے۔ بھارت کا آرٹیکل 25 آزادی سے مذہب کا اعلان کرنے، اس پر عمل کرنے اور اس کی تبلیغ کرنے کے حق کی ضمانت دیتا ہے تاہم، ہندوستان اقلیتی مذہبی مقامات کی حفاظت اور شہری ترقی، بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں اور تاریخی مقامات کے تحفظ جیسے وسیع تر سماجی خدشات کو حل کرنے اور ان کے درمیان توازن قائم کرنے میں ناکام رہا ہے۔بھارت میں اقلیتوں کے مذہبی مقامات کے ساتھ روا رکھے جانے والے سلوک کے حوالے سے مختلف واقعات نے تشویش میں اضافہ کیا ہے۔ ایسی مثالیں بھی سامنے آئی ہیں جہاں اقلیتی برادریوں سے تعلق رکھنے والی مساجد، گرجا گھروں اور دیگر مذہبی مقامات کو توڑ پھوڑ، تباہی یا دوسرے مقاصد کے لئے استعمال کرنے جیسے اقدامات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ یہ کارروائیاں مذہبی رواداری اور آزادی کے اصولوں کے منافی ہیں، جس سے ہندوستان میں اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ پر سوالات اٹھتے ہیں۔ اس مسئلے کے ایک اور پہلو میں شہری ترقی کے منصوبے اور بنیادی ڈھانچے کے اقدامات شامل ہیں جو اقلیتی مذہبی مقامات کو متاثر کرتے ہیں۔ نام نہاد ترقی کی بنیاد پر اقلیتی برادریوں سے وابستہ مساجد، گرجا گھروں اور دیگر مقدس مقامات کو مسمار یا بے گھر کیا گیا ہے۔بابری مسجد، ایک قابل احترام اسلامی مقدس مقام، مسلم دنیا کے مذہبی ورثے کی گواہی کے طور پر جانی جاتی ہے۔ یہ مسجد مسلمانوں کے لیے بہت اہمیت رکھتی ہے اور کمیونٹی کے لیے ایک روحانی مرکز کے طور پر کام کرتی ہے۔اجتماعی مشغولیت کے طور پر، باربری مسجد نے مسلمانوں کی زندگیوں کی تشکیل میں اہم کردار ادا کیا۔ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر بہت زیادہ تنازعات کا شکار رہی ہے، جس نے تاریخ، مذہب اور سیاست کو ایک دوسرے سے منسلک کرنے والی بحثوں کو جنم دیا ہے۔ یہ متنازعہ مسئلہ ہندوستانی سماجی و سیاسی منظر نامے کا ایک مرکزی نقطہ رہا ہے، جو بھارت کے نظام میں پیچیدگیوں کی عکاسی کرتا ہے۔رام مندر کا تنازعہ ایودھیا، اتر پردیش میں اس جگہ کے گرد گھومتا ہے، جہاں ہندو مانتے ہیں کہ بھگوان رام کی پیدائش ہوئی تھی، اور بابری مسجد بھی وہیں تعمیر کی گئی تھی۔رام مندر تنازعہ کی جڑیں قرون وسطی کے دور سے ملتی ہیں جب مغل بادشاہ بابر نے 16ویں صدی میں ایودھیا میں بابری مسجد تعمیر کی تھی۔ تاہم، اس مقام کو ہندوں نے طویل عرصے سے بھگوان رام کی جائے پیدائش کے طور پر تعظیم دی ہے، جو ہندو مہاکاوی رامائن کی ایک مرکزی شخصیت ہے۔ بھارت کے شدت پسند عناصر نے اس مسئلے کو مزید ہوا دیئے رکھی۔یہ تنازعہ 6 دسمبر 1992 کو ایک نازک موڑ پر پہنچ گیا، جب ہندو بلوائیوں کے ایک بڑے ہجوم نے بابری مسجد کو شہید کر دیا اور یہ دعوی کیا کہ یہ ایک پہلے سے موجود ہندو مندر کے کھنڈرات پر تعمیر کی گئی تھی جو بھگوان رام کی جائے پیدائش ہے۔ اس واقعے نے ملک بھر میں مظاہروں اور فرقہ وارانہ کشیدگی کو جنم دیا، جس کے نتیجے میں سماجی ہلچل اور اس کے بعد قانونی لڑائیاں شروع ہوئیں۔رام مندر تنازعہ سے جڑی قانونی جنگ ہندوستان کی عدالتی تاریخ میں ایک تاریخی واقعہ بن گئی۔ 2019 میں ہندوستان کی سپریم کورٹ نے ایک متنازعہ اور اقلیتوں کے خلاف دیا جانے والا فیصلہ سنایا، جس میں اس متنازعہ جگہ پر ہندو مندر کی تعمیر کے حق میں فیصلہ دیا گیا جبکہ مسلم کمیونٹی کو مسجد کی تعمیر کے لیے ایک متبادل زمین مختص کی گئی۔ رام مندر تنازعہ نے ہندوستان میں فرقہ وارانہ تعلقات پر گہرا اثر ڈالا ہے۔ بابری مسجد کے انہدام اور اس کے بعد کے واقعات نے فرقہ وارانہ فسادات کو جنم دیا جس کے نتیجے میں ہندوں کے ہاتھوں مسلم اقلیتوں کی جانوں اور املاک کا نقصان ہوا۔اس مسئلے کو مودی اور بی جے پی نے انتخابی فوائد کے لیے کمیونٹیز کو پولرائز کرنے، تنا کو بڑھانے اور مذہبی فالٹ لائنوں کو گہرا کرنے کے لیے بھی استعمال کیا ہے۔اقلیتوں، خاص طور پر مذہبی اور نسلی گروہوں کو نشانہ بنانے والے واقعات کے حوالے سے اہم خدشات کا اظہار کیا گیا ہے، جس سے ہندوستان کے اندر اور بین الاقوامی سطح پر بڑے پیمانے پر بحث چھڑ گئی ہے۔ فرقہ وارانہ تشدد مذہبی برادریوں کے درمیان وقفے وقفے سے پھوٹتا رہا ہے جس کے المناک نتائج برآمد ہوئے ہیں۔ 2002 میں گجرات فسادات اور 2013 میں مظفر نگر فسادات کے نتیجے میں کء جانوں کا نقصان ہوا اور ہزاروں لوگ بے گھر ہوئے۔ ان واقعات سے اقلیتوں پر اکثر غیر متناسب اثرات مرتب ہوتے رہے ہیں۔ گا ماتا کی حفاظت کے نام پر رپورٹ شدہ واقعات بھی سامنے آتے رہتے ہیں، جہاں خود ساختہ گروہ ایسے افراد کو نشانہ بناتے ہیں جن پر گائے کے ذبیحہ یا گائے کے گوشت کے استعمال کا شبہ ہوتا ہے۔ ان واقعات نے بنیادی طور پر مسلم اور دلت برادریوں کو متاثر کیا ہے اور ان کے نتیجے میں تشدد، دھمکیاں، اور بعض صورتوں میں جانی نقصان بھی ہوا ہے۔مذہبی امتیاز کے بارے میں خدشات مختلف سیاق و سباق میں سامنے آئے ہیں، جن میں ایسی مثالیں بھی شامل ہیں جہاں مذہبی اقلیتی برادریوں کے افراد کو تعلیم اور روزگار کے مواقع تک رسائی میں رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ مذہبی شناخت کی بنیاد پر امتیازی سلوک ہندوستانی آئین میں شامل مساوات اور سیکولرازم کے اصولوں کی نفی کرتا ہے۔ شہریت کے قوانین میں تبدیلیاں، جیسے کہ شہریت ترمیمی ایکٹ (CAA)، نے بعض اقلیتی گروہوں، خاص طور پر مسلمانوں کے ممکنہ اخراج کے بارے میں بحث کو ہوا دی ہے۔ ان قانونی تبدیلیوں کے ہندوستانی معاشرے کے تانے بانے پر اثرات مرتب ہوتے ہیں اور یہ غیر متناسب طور پر کمزور آبادیوں کو متاثر کرتے ہیں۔ اقلیتی برادریاں خاص طور پر دلت اور مسلمان، سماجی اور معاشی پسماندگی کا شکار ہیں۔ تعلیم، روزگار اور دیگر مواقع تک رسائی میں چیلنجز بدستور برقرار ہیں، جو عدم مساوات اور اخراج کے بارے میں خدشات میں حصہ ڈالتے ہیں۔ مذہبی خطوط پر سیاسی پولرائزیشن کی مثالیں دیکھی گئی ہیں، جن میں مخصوص سیاسی بیان بازی اور اقدامات تفرقہ انگیزی کو بھڑکانے کا کام کرتے ہیں۔ اس نے سماجی ہم آہنگی پر پڑنے والے اثرات اور سیاسی گفتگو میں اقلیتی آوازوں کی ممکنہ پسماندگی کے بارے میں خدشات کو جنم دیا ہے۔بھارت کے برعکس پاکستان نے کثیر ثقافتی اور مذہبی تنوع کا ملک ہونے کے باوجود حالیہ برسوں میں اپنی اقلیتی برادریوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے اہم پیش رفت کی ہے۔ حکومت نے مذہبی اقلیتوں کی مخصوص ضروریات کو پورا کرنے اور سماجی ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لیے مختلف فلاحی پروگرام شروع کیے ہیں۔پاکستان کا آئین مساوات، عدم امتیاز اور اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ کے اصولوں کو برقرار رکھتا ہے۔ آرٹیکل 36 واضح طور پر اقلیتوں کے حقوق کا تحفظ کرتا ہے اور ان کے مذہب پر عمل کرنے اور اس کا اعلان کرنے کی آزادی کو یقینی بناتا ہے۔ یہ آئینی وابستگی اقلیتی برادریوں کی بہتری کے لیے فلاحی پروگراموں کو ڈیزائن اور نافذ کرنے کے لیے حکومت کے لیے ایک مضبوط بنیاد بناتی ہے۔ پاکستان ہر سال 11 اگست کو اقلیتوں کی بہبود کا دن مناتا ہے، جو پاکستان کے بانی قائد اعظم محمد علی جناح کی تقریر کی یاد میں منایا جاتا ہے۔ قائد اعظم نے تمام شہریوں کے مساوی حقوق پر زور دیا، چاہے ان کا کوئی بھی مذہب ہو۔ 11 اگست کے دن حکومت اقلیتی برادریوں کے حقوق اور شراکت کے بارے میں بیداری پیدا کرنے، اتحاد اور رواداری کے جذبے کو فروغ دینے کے لیے تقریبات اور سرگرمیوں کا اہتمام کرتی ہے
۔افرادی قوت میں نمائندگی کو یقینی بنانے کے لیے پاکستانی حکومت نے اقلیتوں کے لیے مختلف سرکاری محکموں میں ملازمتوں کے کوٹے کا نفاذ کیا ہے۔ یہ مثبت اقدام عدم توازن کو دور کرتا ہے اور اقلیتوں کو عوامی خدمات میں فعال طور پر حصہ لینے کے مواقع فراہم کرتا ہے، جس سے پاکستان کی شمولیت اور اس کی اقلیتی برادریوں کی فلاح و بہبود کے عزم کی مثال ملتی ہے۔قانون ساز اداروں میں مختص نشستیں اقلیتی برادریوں کی سیاسی نمائندگی میں حصہ ڈالتی ہیں۔ حکومت نے اقلیتی گروہوں میں تعلیم کو فروغ دینے کے لیے اسکالرشپ پروگرام اور اقدامات متعارف کرائے ہیں اور پرائمری سے لے کر اعلی تعلیم تک مختلف سطحوں پر اسکالرشپ دیئے جاتے ہیں۔ یہ اقدام اقلیتی پس منظر سے تعلق رکھنے والے طلبا کو مالی رکاوٹوں کا سامنا کیے بغیر تعلیم حاصل کرنے کے قابل بناتا ہے۔ مزید برآں، حکومت نے نمایاں اقلیتی آبادی والے علاقوں میں اسکول اور تعلیمی ادارے بھی قائم کیے ہیں۔اقلیتی برادریوں کی عبادت گاہوں کی حفاظت اور دیکھ بھال ان کی مذہبی آزادی کے لیے ضروری ہے۔ پاکستانی حکومت نے اقلیتوں سے تعلق رکھنے والے گرجا گھروں، مندروں، گوردواروں اور دیگر مذہبی مقامات کی حفاظت اور تزئین و آرائش کے لیے اقدامات کیے ہیں اور اس بات کو یقینی بنایا ہے کہ یہ مقامات زیارات اور عبادات کے لیے قابل رسائی رہیں۔ بین المذاہب ہم آہنگی کو فروغ دینا متنوع مذہبی برادریوں کے درمیان اتحاد کو فروغ دینے کے لیے حکومت کی کوششوں کا ایک اہم پہلو ہے۔ مختلف مذہبی گروہوں کے درمیان مکالمے، افہام و تفہیم اور تعاون کی حوصلہ افزائی کرنے والے اقدامات اور فورمز ایک زیادہ روادار اور ہم آہنگ معاشرے کی تعمیر میں کردار ادا کرتے ہیں۔حالیہ برسوں میں پاکستان نے اقلیتوں کے خلاف امتیازی سلوک کو ختم کرنے کے لیے قانون سازی کی ہے۔ جبری مذہبی تبدیلی پر پابندی اور مذہبی اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے قوانین بنائے گئے ہیں تاکہ ایک قانونی فریم ورک کو یقینی بنایا جا سکے جو تمام شہریوں کے حقوق اور وقار کا تحفظ کرے۔ پاکستان کا اپنی اقلیتی برادریوں کی فلاح و بہبود کے لیے عزم ان کی مخصوص ضروریات اور خدشات کو دور کرنے کے لیے مختلف اقدامات کے ذریعے ظاہر ہوتا ہے۔ حکومت کی شمولیت کو فروغ دینے، مذہبی آزادی کے تحفظ اور اقلیتوں کے لیے مساوی مواقع کو یقینی بنانے کی کوششیں ملک کے مزید متنوع، رواداری اور ہم آہنگی والے معاشرے کی جانب سفر میں حصہ ڈالتی ہیں۔ یہ اقدامات پاکستان کے سماجی تانے بانے کو تقویت دینے والے تنوع کو پہچاننے اور اس کی قدر کرنے کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہیں۔کرتار پور راہداری پاکستان میں اقلیتوں کے لیے محبت اور احترام کی علامت کے طور پر کام کرتی ہے اور یہ تاریخی دشمنیوں سے بالاتر ہو کر مذہبی ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لیے سفارت کاری اور خیر سگالی کی طاقت کی عمدہ مثال ہے۔ بھارت میں سکھوں کی عبادت گاہوں ڈیرہ بابا نانک صاحب اور پاکستان میں گوردوارہ دربار صاحب کرتار پورہ کو جوڑنے والی یہ راہداری امن اور تعاون کی علامت ہے۔ اس کی تعمیر میں پاکستانی حکومت کا نمایاں کردار سفارتی کوششوں کو ظاہر کرتا ہے جس کا مقصد فاصلوں کو کم کرنا اور مذہبی زیارت کو سہولت فراہم کرنا ہے۔گوردوارہ دربار صاحب کرتارپورہ سکھ مذہب کے بانی گرو نانک دیو جی کی آخری آرام گاہ کے طور پر عالمی سکھ برادری کے لیے بہت زیادہ مذہبی اہمیت رکھتا ہے۔ پاکستان میں واقع، ہندوستانی قصبے ڈیرہ بابا نانک صاحب سے منسلک سرحد کے بالکل پار واقع، یہ مزار سکھ یاتریوں کے لیے ایک دیرینہ خواہش کا باعث رہا ہے اور وہ اس کے براہ راست اور قابل رسائی راستے کی تلاش میں رہے ہیں۔ سکھ یاتریوں کے لیے راہداری کی اہمیت اور ہندوستان اور پاکستان کے درمیان خیر سگالی کو فروغ دینے کی صلاحیت کو تسلیم کرتے ہوئے پاکستانی حکومت نے اس خواب کو حقیقت بنانے کے لیے ایک فعال موقف اختیار کیا۔ پاکستانی حکومت نے نومبر 2018 میں کرتار پور کوریڈور کا سنگ بنیاد رکھا۔پاکستانی حکومت نے جدید ترین انفراسٹرکچر تیار کر کے سکھ زائرین کے لیے آرام و سکون سے یاترا کرنیکو یقینی بنانے کے لیے اپنی وابستگی کا مظاہرہ کیا اور اس مقصد کے لئے امیگریشن چیک پوسٹ، ایک مسافر ٹرمینل اور ایک ہائی ٹیک سیکیورٹی سسٹم شامل سکھ یاتریوں کی خدمت کے لیے تعمیر کیا گیا ہے۔ یہ سہولیات بڑی تعداد میں زائرین کو ایڈجسٹ کرنے کے لیے بنائی گئی تھیں اور انہیں مقدس گردوارہ تک بغیر کسی پریشانی کے ایک محفوظ راستہ فراہم کیا گیا ہے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ کرتار پور کوریڈور ہندوستان سے آنے والے سکھ یاتریوں کے لیے ویزا فری رسائی کی پیشکش کرتا ہے اور مقدس مقام تک رسائی کو آسان بناتا ہے۔یہ کوششیں پاکستانی حکومت کی مذہبی سیاحت کو آسان بنانے اور عوام سے عوام کے روابط کو فروغ دینے کے عزم کی نشاندہی کرتی ہیں۔ کرتارپور کوریڈور مذہبی یاتریوں کے لیے ایک راہداری ہونے کے علاوہ یہ بین المذاہب ہم آہنگی اور باہمی احترام کی ایک مضبوط علامت کے طور پر کھڑا ہے۔ عالمی سطح پر سراہا گیا یہ اقدام تنا کے ماحول میں پڑوسی ممالک کے درمیان تعاون کی خواہش کی ایک نادر مثال ہے۔ اس راہداری میں مکالمے اور فہم کی ترغیب دینے کی صلاحیت ہے، جس سے متنوع مذہبی برادریوں کے درمیان پرامن بقائے باہمی کو فروغ ملے گا۔ عالمی برادری کرتارپور کوریڈور کی تعمیر میں پاکستان کی کوششوں کو تسلیم کرتی ہے اور اسے خطے میں اعتماد سازی اور خیر سگالی کو فروغ دینے کی جانب ایک اہم پیش رفت کے طور پر سراہتی ہے۔ اقوام متحدہ اور مختلف ممالک نے مذہبی سیاحت اور دو طرفہ تعلقات پر راہداری کے مثبت اثرات کو تسلیم کیا ہے۔ کرتار پور راہداری امید کی کرن کا کام کرتی ہے اور سفارت کاری اور خیر سگالی کے تبدیلی پر اثرات کو واضح کرتی ہے۔ اس راہداری کی تعمیر میں پاکستانی حکومت کا نمایاں کردار مذہبی ہم آہنگی کو فروغ دینے، عوام سے عوام کے روابط کو آسان بنانے اور تاریخی دشمنیوں سے بالاتر ہونے کے عزم کی عکاسی کرتا ہے۔ بھارت مسلسل پاکستان کے خلاف ففتھ جنریشن وار اور جھوٹے پراپیگنڈے میں مصروف ہے۔ بھارت اور اس کے میڈیا نے حال ہی میں شاردا پیتھ کے حوالے سے بھی جھوٹا پروپیگنڈا کیا۔ آزاد جموں و کشمیر کی خوبصورت وادی نیلم میں واقع شاردا پیتھ برصغیر پاک و ہند کے بھرپور ثقافتی اور مذہبی ورثے کا ثبوت ہے۔ قدیم جگہ ہندوں کے لیے اور خاص طور پر دیوی سرسوتی کے پیروکاروں کے لیے بہت اہمیت رکھتی ہے۔ شاردا پیتھ، جسے شاردا دیوی مندر بھی کہا جاتا ہے، محض ایک مذہبی مقام نہیں ہے بلکہ ایک تاریخی اور ثقافتی خزانہ ہے۔شاردا پیتھ کی تاریخ بہت پرانی ہے۔ نام "شاردا” سنسکرت کے لفظ علم سے ماخوذ ہے، جو کہ سیکھنے کے مرکز کے طور پر مندر کی اہمیت کو واضح کرتا ہے۔ ہندو افسانوں میں بیان کیا گیا ہے کہ بھگوان شیو نے شاردا پیتھ کی بنیاد رکھی اور اسے علما، باباں اور روحانی متلاشیوں کے لیے ایک قابل احترام منزل تک پہنچایا۔ اگرچہ شاردا پیتھ کی موجودہ حالت صدیوں کے دوران مختلف حملوں اور قدرتی آفات کی وجہ سے اپنی تاریخی عظمت سے مماثل نہیں ہے، لیکن باقی ماندہ کھنڈرات اب بھی پرانے دور کی تعمیراتی خوبیوں کی گواہی دیتے ہیں۔ پیچیدہ نقش و نگار اور علامتی نمائندگی کے ساتھ مندر قدیم تہذیب کے فنکارانہ اور روحانی رجحانات کی عکاسی کرتا ہے۔ شاردا گاں اور ہندوستان اور پاکستان کے درمیان لائن آف کنٹرول (ایل او سی) کے قریب واقع اس کی باقیات ایک زمانے کے شاندار کمپلیکس کی ایک جھلک پیش کرتی ہیں۔ عقیدت مندوں کا ماننا ہے کہ اس مقدس مقام پر سرسوتی کا آشیرواد حاصل کرنے سے ان کی عقل اور دانش میں اضافہ ہوتا ہے۔ بھارتی میڈیا پاکستان اور کشمیر کے حوالے سے مسلسل جھوٹ کا سہارا لے کر دشمنی کو ہوا دے رہا ہے اور ان جھوٹوں کو بار بار بے نقاب کیا جا چکا ہے۔حال ہی میں ہندوستانی میڈیا نے شاردا یونیورسٹی کے بارے میں غلط معلومات پھیلانا شروع کر دی اور جھوٹا پروپیگنڈا نشر کرنا شروع کر دیا۔ ان کا دعوی تھا کہ پاکستانی فوج شاردا یونیورسٹی کی جگہ ایک کیفے ٹیریا بنا رہی ہے۔ تاہم، تحقیقات کرنے پر بھارتی جھوٹ کا پول بے نقاب ہوا اور کوئی کیفے ٹیریا نہیں ملا۔ مقامی لوگوں کے پرزور مطالبات اور شاردا کی تاریخی اہمیت کے پیش نظر ایک عظیم الشان لائبریری قائم کی گئی ہے، جو تاریخ کے متوالوں کے لیے ایک قیمتی وسیلہ ثابت ہو رہی ہے۔ لائبریری کے قیام کے خلاف جھوٹا پروپیگنڈہ کرکے تنازعہ کھڑا کرنے کی بھارتی میڈیا کی کوشش اس وقت ناکام ہوگئی جب یہ انکشاف ہوا کہ دعوی کی گئی جگہ پر کوئی کیفے ٹیریا نہیں ہے۔ ضلع نیلم کے ڈپٹی کمشنر نے واضح کیا کہ ایک بہترین لائبریری قائم کی گئی ہے جس کا عوام بھرپور طریقے سے استعمال کر رہے ہیں۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ بھارتی میڈیا اکثر غلط معلومات پر کام کرتا ہے۔
قارئین، بھارتی میڈیا کے پروپیگنڈے کے جواب میں ہمارے لوگوں نے زور دے کر کہا ہے کہ بھارت کو شاردا یونیورسٹی پر تبصرہ کرنے کا کوئی حق نہیں ہے۔ ہندوستان جیسے ملک میں جہاں مودی کی قیادت میں ہندوتوا کے پیروکاروں نے مسلمانوں کے خلاف دشمنی میں شدت پیدا کی ہے، کشمیر کے جغرافیائی منظر نامے کو تبدیل کرکے اس کی مسلم اکثریتی شناخت کو مٹایا ہے اور مظالم کا ارتکاب کیا ہے اسے آزاد کشمیر میں ہندوں کے مذہبی حقوق پر بات کرتے ہوئے شرم آنی چاہیے ۔ اس کے برعکس پاکستان تمام مذاہب کے حقوق کا تحفظ کرتے ہوئے مذہبی ہم آہنگی کو برقرار رکھتا ہے۔ اس کی روشن مثال کرتارپور کوریڈور ہے، جو اقلیتوں کے ساتھ احترام کے ساتھ برتا کرنے کے پاکستان کے عزم کو ظاہر کرتا ہے۔ سچائی دنیا پر عیاں ہے: پاکستان میں اقلیتیں محفوظ ہیں، جب کہ ہندوستان میں انہیں خطرات کا سامنا ہے۔ بھارت کا بے بنیاد پروپیگنڈہ جھوٹ پر مبنی ہے اور حقیقی تصویر کی عکاسی نہیں کرتا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Check Also
Close
Back to top button